The City of Football Makers in Pakistanفٹبال کا دارالحکومت سیالکوٹ

February 13, 2014

ہوسکتا ہے کہ آپ نے سیالکوٹ شہر کے بارے میں کچھ زیادہ نہ سنا ہو، مگر اسکی ایک چیز پوری دنیا میں مشہور ہے، وہ ہے فٹبال، اس شہر مین سالانہ چار کروڑ فٹبال تیار کئے جاتے ہیں، جو کہ پوری دنیا کی پیداوار کا 75 فیصد حصہ بنتا ہے۔ رواں سال برازیل میں ہونے والے فٹبال ورلڈکپ کیلئے بھی اس شہر کو بہت بڑے آرڈرز ملے ہیں، تاہم ان فٹبال کارخانوں میں کچھ تلخ حقائق بھی چھپے ہیں، اسی بارے میں سنتے ہیں آج کی رپورٹ

35پینتیس سالہ محمد ادریس اپنی بیساکھیوں کی مدد سے سیالکوٹ شہر کی ایک فیکٹری کی جانب جارہے ہیں، وہ گزشتہ سترہ سال سے فٹبال سینے کا کام کررہے ہیں، جس سے وہ اپنی بیوی اور چھ بچوں پر مشتمل گھرانے کی کفالت کیلئے روزانہ تین سو روپے کمالیتے ہیں۔

ادریس اپنے دیگر تیس ساتھیوں کے ہمراہ کارخانے کے اندر بیٹھے ہوئے ہیں۔

محمد ادریس”کمانے کیلئے مجھے کوئی اور کام نہیں آتا، اگر ہمارے گاﺅں میں یہ فٹبال فیکٹری نہ ہوتی تو میں شہر میں آوارہ گھومتا رہتا یا گلیوں میں بھیک مانگ رہا ہوتا۔ میں اپنے لئے اور اپنے وطن کیلئے یہ کام کرتا ہوں، تاکہ پاکستان کو دنیا میں عزت حاصل ہوسکے”۔

ادریس کی اہلیہ شازیہ ادریس اور دو بیٹیاں بھی اسی فیکٹری میں کام کرتی ہیں، شازیہ اپنے ساتھ چار سالہ بیٹے کو بھی لیکر آئی ہوئی ہیں، کیونکہ گھر میں اس کی دیکھ بھال کرنے والا کوئی نہیں۔

شازیہ”ہمارے خاندان کا گزارہ اسی صورت میں ہوسکتا ہے جب ہم دونوں کام کریں، ورنہ ہم اپنے اخراجات پورے نہیں کرسکتے، کئی بار میرے شوہر ٹانگ میں درد کی وجہ سے کام نہیں کرپاتے، اس وقت حالات بہت خراب ہوجاتے ہیں”۔

پاکستان سالانہ کروڑوں فٹبال برآمد کرتا ہے اور سیالکوٹ کو فٹبال کی پیداوار کا عالمی دارالحکومت مانا جاتا ہے، جہاں دو ہزار کارخانے یہ کام کررہے ہیں۔شہر کے داخلی راستے پر ہی سنرہے رنگ کا ایک بہت بڑا فٹبال لگایا گیا ہے۔

صفدر ساندل پاکستان ساختہ فٹبال برآمد کرنے والے اولین افراد میں سے ایک ہیں، ان کا ٹینگو فٹبال 1982ءانیس سو بیاسی کے فیفا ورلڈکپ میں استعمال کیا گیا تھا۔

صفدر”موجودہ صورتحال کو دیکھتے ہوئے میں بہت خوشی سے کہہ سکتا ہوں کہ صرف میری فیکٹری ہی نہیں بلکہ شہر کی تمام فیکٹریوں کی فٹبال پیداوار میں لگ بھگ 35 پینتیس فیصد کا اضافہ ہوا ہے، جس کی وجہ رواںسال منعقد ہونے والا فٹبال ولڈکپ ہے”۔

اس شہر میں کئی نسلوں کے روزگار کا ذریعہ فٹبال بنانا رہا ہے، اور اب بھی اس شہر کے دو لاکھ افراد یہی کام کررہے ہیں۔59 سالہ غفور حسین لڑکپن سے ہی یہ کام کررہے ہیں۔

غفور”فٹبال کھلاڑیوں کیلئے تفریح کا ذریعہ ہے، جبکہ دیگر افراد کیلئے یہ آمدنی کا ذریعہ ہے، مجھے فٹبال سے محبت ہے کیونکہ میں جانتا ہوں کہ اگر میں فٹبال نہ بناﺅں تو میرا خاندان کھانا نہیں کھا سکے گا۔ میں نہیں چاہتا کہ میرے بچے میری جیسی زندگی گزارے”۔

سیالکوٹ میں تیار ہونے والے فٹبال بین الاقوامی برانڈز جیسے ایڈیڈاز،نائیکی اور ری بوک وغیرہ فروخت کرتے ہیں، تاہم 35پینتیس سالہ آٹھ بچوں کی ماں رفعت نصیر کو دن بھر میں دو گیندیں سینے پر صرف سو روپے ہی ملتے ہیں۔

رفعت”جب میری شادی ہوئی تو میں نے فٹبال کو تیار کرنا سیکھنا شروع کیا، میں نے دیکھا کہ خواتین گھروں پر فٹبال سیتی ہیں، میری بنیائی کمزور ہوگئی ، جبکہ میرے کندھوں اور کمر میں درد ہونے لگا، مگر میں اپنے بڑے خاندان کے گزارے کیلئے بدستور کام کررہی ہوں اور میں بہت محنت سے کام کرتی ہوں”۔

ماضی میں بیشتر فٹبال فیکٹریوں میں بچے بھی کام کرتے تھے، تاہم چائلڈ لیبر پر عالمی ردعمل کے بعد سیالکوٹ میں 2007ءسے بچوں کو کام کرنے کی اجازت نہیں۔لیاقت چوہدری ایک فٹبال فیکٹری کے منیجر ہیں۔

لیاقت”فیکٹریوں میں چائلڈ لیبر پر حکومتی پابندی کے بعد سے فٹبال کی پیداوار کم ہوگئی ہے، اب نئے ورکرز تلاش کرنا مشکل ہوگیا ہے”۔

فیکٹریوں میں تنخواہیں بھی کم ہیں، خواتین ورکرز ہفتہ بھر میں دو ہزار روپے ہی کما پاتی ہیں، جبکہ مردوں کی آمدنی ان سے دوگنا زائد ہے۔ سیالکوٹ چیمبر آف کامرس کے چیئرمین ڈاکٹر سرفراز بشیر کا کہنا ہے کہ صورتحال میں بہتری کیلئے کام کیا جارہا ہے۔

ڈاکٹر سرفراز”ہم اس حوالے سے مسلسل کام کررہے ہیں، اگر برآمد کنندگان کو اپنی پیداوار کی اچھی قیمت ملے، تو وہ ورکرز کی تنخواہوں کو بھی بڑھائے گا”۔

محمد ادریس اور ان کی اہلیہ فیکٹری میں دس گھنٹے کی شفٹ کے بعد گھر واپس جارہے ہیں، شازیہ نے اپنے شوہر کے جوتے اتارے اور رونے لگی۔

شازیہ”میری خواہش ہے کہ مریے بچے اچھی تعلیم حاصل کریں، مگر ایسا ہوتا نظر نہیں آتا۔ میں جانتی ہوں کہ ہم ایسا نہیں کرسکتے اور ہم تعلیم کا خرچہ نہیں اٹھاسکتے، کیونکہ ہم بمشکل انکی خوراک کا انتظام کرپاتے ہیں۔ میں جانتی ہوں کہ میرے بچوں کی زندگی بھی ہماری جیسی ہوگی اور مجھے یہ معلوم ہے کہ ہماری زندگی کبھی تبدیل نہیں ہوگی”۔

Category: Asia Calling | ایشیا کالنگ

Comments are closed.

burberry pas cher burberry soldes longchamp pas cher longchamp pas cher polo ralph lauren pas cher nike tn pas cher nike tn nike tn pas cher air max 90 pas cher air max pas cher roshe run pas cher nike huarache pas cher nike tn pas cher louboutin pas cher louboutin soldes mbt pas cher mbt pas cher hermes pas cher hollister pas cher hollister paris herve leger pas cher michael kors pas cher remy hair extensions clip in hair extensions mbt outlet vanessa bruno pas cher vanessa bruno pas cher vanessa bruno pas cher ralph lauren pas cher