PPI NEWS Bulletin 1500پی پی آئی نیوز بلیٹن

December 11, 2013

ہیڈلائینز:۔

امید ہے سپریم کورٹ انسانی حقوق کیلئے کام کرتی رہے گی، چیف جسٹس۔
چیف جسٹس کی اپنے آخری دن چار مقدمات کی سماعت۔
بھارت کیساتھ تعلقات معمول پر لانے کیلئے اقدامات کررہے ہیں، وزیراعظم۔
پچاس ارب سندھ کے ذمہ واجب الادا ہیں رقم ادا نہ کی گئی تو بجلی کاٹ دیں گے، عابد شیرعلی۔
اور
لیجنڈ اداکار دلیپ کمار کے یوم پیدائش پر بلیٹن میں شامل ہے خصوصی رپورٹ۔

خبروں کی تفصیل:۔

چیف جسٹس افتخار محمد چوہدری نے کہا ہے کہ امید ہے سپریم کورٹ جسٹس تصدق جیلانی کی قیادت میں انسانی حقوق کے لیے کام کرتی رہے گی، خدا کرے کہ آنے والی عدلیہ بنیادی انسانی حقوق اور آئین و قانون کی بالادستی کے لیے کام کرے۔اپنی ریٹائرمنٹ پر فل کورٹ ریفرنس سے الوداعی خطاب کرتے ہوئے چیف جسٹس نے کہا کہ امید ہے سپریم کورٹ جسٹس تصدق جیلانی کی قیادت میں انسانی حقوق کے لیے کام کرتی رہے گی۔ انہوں نے کہا کہ آزادانہ اور شفاف انتخابات کے بغیر جمہوریت ممکن نہیں ،سپریم کورٹ نے بلدیاتی انتخابات کرانے کے لیے اپنا کردار ادا کیا۔ انہوں نے کہا کہ اب یہ ممکن نہیں کہ کوئی اپنی تعلیمی اسناد اور اثاثوں کے بارے میں عوام سے جھوٹ بولے ،ایسا لگتا ہے کہ ملک کے ایگزیکٹو کرپشن کے کینسر کو ختم کرنے میں بے بس ہیں۔ چیف جسٹس کا کہنا تھا کہ 9 مارچ 2007 کے بعد تمام ججز ، وکلائ ، طلبائ اور سیاسی ورکروں نے عدلیہ کی آزادی کے لیے جدوجہد کی، وہ تمام ججز کے مشکور ہیں کہ انہوں نے انصاف کی فراہمی کے لیے میرا ساتھ دیا۔

چیف جسٹس افتخار محمد چوہدری نے اپنے عہدے کے آخری دن بلوچستان بدامنی کیس سمیت چار مقدمات کی سماعت کی،چیف جسٹس نے آخری مقدمہ میجر عباس بنام ریاض علی سنا۔افتخار محمد چودھری آٹھ سال پانچ مہینے سولہ دن چیف جسٹس کے عہدے پر فائز رہے،اٹارنی جنرل منیر اے ملک نے چیف جسٹس کو آخری مقدمے کی سماعت کے بعد بھرپور انداز میں خراج تحسین پیش کیا۔ اٹارنی جنرل نے کہا کہ چیف جسٹس صاحب آپ نے ہم سب کاسر فخر سے بلند کردیا۔جسٹس جواد ایس خواجہ نے کہا کہ کیا تمام لوگ ایسا ہی سوچتے ہیں۔

وزیراعظم نواز شریف نے کہا ہے کہ پاکستان اور بھارت کے پاس پرامن طریقے سے رہنے کے سواکوئی چارہ نہیں اس لئے بھارت کے ساتھ تعلقات معمول پر لانے کے لئے نئے اقدامات کررہے ہیں۔وزیراعظم نوازشریف سے بھارتی ہائی کمشنر آر راگھون نے ملاقات کی جس میں دونوں ملکوں کے درمیان تعلقات اور موجودہ صورتحال پر تبادلہ خیال کیا گیا۔ وزیر اعظم نے کہا کہ پاکستان بھارت کے ساتھ تمام تصفیہ طلب تنازعات حل کرنا چاہتاہے اس سلسلے میں دونوں ممالک کے درمیان مذاکراتی عمل جلد شروع ہونا ہماری ترجیحات میں شامل ہے۔ انہوں نے کہا کہ بھارتی وزیر اعظم من موہن سنگھ کے ساتھ نیویارک میں ہونے والی ملاقات نے انہیں معاملات کو سمجھنے میں مدد ملی۔وزیر اعظم نوازشریف کا کہنا تھا کہ کنٹرول لائن پر موجودہ پ±رامن صورت حال اطمینان بخش ہے، حالات کو بہتر رکھنے کے لئے دونوں ملکوں کو 2003 کے جنگ بندی معاہدے کی پاسداری کرنا ہوگی، اس سلسلے میں دونوں ممالک کے درمیان ڈی جی ملٹری آپریشنز رابطوں کاموجودہ نظام مزید مضبوط کرنے کی ضرورت ہے، اس سے پاکستان اور بھارت ناخوشگوار حالات سے بچ سکتے ہیں۔

وزیر مملکت برائے پانی و بجلی عابد شیر علی نے کہا ہے کہ پچاس ارب سندھ کے ذمہ واجب الادا ہیں۔ رقم ادا نہ کی گئی تو بجلی کاٹ دیں گے۔قومی اسمبلی کا اجلاس سپیکر ایاز صادق کی زیر صدارت ہوا۔ عابد شیر علی نے کے ای ایس سی اور سندھ حکومت کو کڑی تنقید کا نشانہ بنایا۔ انہوں نے کہا کہ پچاس ارب سندھ کے ذمہ واجب الادا ہیں۔ رقم ادا نہ کی گئی تو بجلی کاٹ دیں گے۔ جہاں بلوں کی وصولی کم ہے وہاں لوڈشیڈنگ زیادہ کرِیں گے۔ انہوں نے کہا کے ای ایس سی منافع بھی زیادہ لے رہی ہے اور چارجز بھی زیادہ لگا رہی ہے۔ کے ای ایس سی کے ساتھ معاہدے پر نظر ثانی کریں گے۔

Category: Business, Entertainment, General, Human Rights, News Bulletins | نیوز بلیٹن, Politics

Comments are closed.

burberry pas cher burberry soldes longchamp pas cher longchamp pas cher polo ralph lauren pas cher nike tn pas cher nike tn nike tn pas cher air max 90 pas cher air max pas cher roshe run pas cher nike huarache pas cher nike tn pas cher louboutin pas cher louboutin soldes mbt pas cher mbt pas cher hermes pas cher hollister pas cher hollister paris herve leger pas cher michael kors pas cher remy hair extensions clip in hair extensions mbt outlet vanessa bruno pas cher vanessa bruno pas cher vanessa bruno pas cher ralph lauren pas cher